صفحۂ اول قرآن مجید توضیح المسائل سوانحِ حیات کتب سوال و جواب ویڈیوز مجلات گوشۂ تصاویر
حصۂ کتب میں آيۃ اللہ محمد حسين النجفي کی مستند ادعیہ، اعمال اور زیارات پر جامع کتاب زاد العباد ليوم المعاد شامل کر دی گئی ہے۔ مؤمنین سے التماس ہے کہ مؤلف اور ہمیں اپنی دعاؤں میں یاد رکھیں۔ جامعہ علمیہ سلطان المدارس الاسلامیہ کا تیرھواں سالانہ اجلاس مؤرخہ 9 اور 10 اکتوبر بروز ہفتہ و اتوار منعقد ہورہا ہے جس میں ملک بھر سے جید علماۓ کرام، واعظین اور خطباۓ عظام اپنے بیانات سے مستفیض فرمائیں گے۔ تمام مؤمنین و مسلمین کو تہہ دل سے شرکت کی دعوت دی جاتی ہے۔ مقام: جامعہ علمیہ سلطان المدارس الاسلامیہ، زاہد کالونی سرگودھا۔ رابطہ نمبر: 03016702646  •  آیۃ اللہ محمد حسین نجفی کی عشرۂ محرم 1432ھ کی مجالس 27 دسمبر سے DM Digital TV پر روزانہ 10 بجے پاکستانی وقت کے مطابق نشر کی جائینگی انشاء اللہ • ملک کے مختلف حصوں سے شرعی شہادتوں کے موصول ہو جانے کے بعد حضرت آيۃ اللہ العظمٰی الشیخ محمد حسین النجفی مدظلہ العالی کے نزدیک کل بروز منگل، مورخہ 2 اگست 2011ء کو پاکستان میں یکم رمضان المبارک 1432ھ ہے۔  • تمام مؤمنین اور مسلمین کو ماہِ رمضان المبارک کی بابرکت آمد مبارک ہو۔ • یَا عَلِیُّ یَا عَظِیْمُ یَا غَفُوْرُ یَا رَحِیْمُ اَنْتَ الرَّبُّ الْعَظِیْمُ الَّذِیْ لَیْسَ کَمِثْلِہٰ شَیْئٌ وَّ ھُوَ السَّمِیْعُ الْبَصِیْرُ وَ ھٰذَا شَھْرٌ عَظَّمْتَہ، وَ کَرَّمْتَہ، وَ شَرَّفْتَہ، وَ فَضَّلْتَہ، عَلَی الشُّھُوْرِ وَ ھُوَ الشَّھْرُ الَّذِیْ فَرَضْتَ صِیَامَہ، عَلَیَّ وَ ھُوَ شَھْرُ رَمَضَانَ الَّذِیْ اَنْزَلْتَ فِیْہِ الْقُرْاٰنَ ھُدًی لِلنَّاسِ وَ بَیِّنَاتٍ مِّنَ الْھُدٰی وَ الْفُرْقَانِ وَ جَعَلْتَ فِیْہِ لَیْلَۃَ الْقَدْرِ وَ جَعَلْتَھَا خَیْراً مِنْ اَلْفِ شَھْرٍ فَیَاذَا الْمَنِّ وَلاَ یُمَنُّ عَلَیْکَ مُنَّ عَلَیَّ بِفَکَاکِ رَقَبَتِیْ مِنَ النَّارِ فِیْمَنْ تَمُنُّ عَلَیْہِ وَ اَدْخِلْنِی الْجَنَّۃَ بِرَحْمَتِکَ یَا اَرْحَمَ الرَّاحِمِیْنَ۔  • الحجت اسلامک کمپلیکس - سالانہ 5 روزہ درسِ قرآن و محفلِ مذاکرہ (23 تا 27 رمضان المبارک): مرجعِ تقلید شیعیانِ جہاں، مفسرِ قرآن، محافظِ مذہبِ آلِ محمدؑ حضرت آيۃ اللہ الشيخ محمد حسین النجفی مدظلہ 23 تا 27 رمضان المبارک 1433ھ روزانہ ٹھیک 5:30 بجے رونق افروز منبر ہوں گے انشاء اللہ۔ بمقام الحجت اسلامک کمپلیکس، اسلام پورہ سرگودھا۔  • الحجت اسلامک کمپلیکس کا درس قرآن اور محفل مذاکرہ براہِ راست پروگرام کے صفحے پہ براہِ راست نشر کئے جائیں گے انشاء اللہ۔  • آیۃ اللہ محمد حسین نجفی کا پروگرام تفیہم اسلام ان ٹی وی چینلز سے نشر ہوگا انشاء اللہ: (1) یورپ کے ناظرین کے لئے DM Digital پر ہر ہفتے اور اتوار کی شب برطانوی وقت کے مطابق 12 سے 1 بجے (2) ایشیاء کے ناظرین کے لئے DM Digital Global پر ہر ہفتے اور اتوار کی شب پاکستانی وقت کے مطابق 9 سے 10 بجے۔ DM Digital کے چینلز کی فریکوئنسی کی معلومات اس لنک پہ دیکھی جا سکتی ہیں۔ • ہم انتہائی مسرت کے ساتھ اعلان کرتے ہیں کہ جامعہ ہذا کے سالانہ جلسے (بتاریخ یکم اور 2 اکتوبر 2011ء) کی کاروائی براہِ راست پروگرام کے صفحے پہ براہِ راست نشر کی جاۓ گی انشاء اللہ۔ • جامعہ علمیہ سُلطان المدارس الاسلامیہ کا چودھواں سالانہ اجلاس مؤرخہ 1 ، 2 اکتوبر 2011ء بروز ہفتہ و اتوار منعقد ہورہا ہے جس میں ملک بھر سے جید علماۓ کرام، واعظین اور خطباۓ عظام اپنے بیانات سے مستفیض فرمائیں گے۔ مقام: جامعہ علمیہ سلطان المدارس الاسلامیہ، زاہد کالونی، عقب جوہر کالونی، سرگودھا۔ رابطہ نمبر: 03016702646 • اَعْظَمَ اللَّهُ اُجُورَنا بِمُصابِنا بِالْحُسَيْنِ عَلَيْهَ السَّلامُ وَجَعَلْنا وَاِيَّاكُمْ مِنَ الطَّالِبينَ بِثارِهِ مَعَ وَلِيِّهِ الأِمامِ الْمَهْدىِّ مِنْ آلِ مُحَمَّدٍ عَلَيْهِمُ السَّلامُ - اللہ زیادہ کرے ہمارے اجر و ثواب کو اس پر جو کچھ ہم امام حسین علیہ السلام کی سوگواری میں کرتے ہیں اور ہمیں تمہیں امام حسینؑ کے خون کا بدلہ لینے والوں میں قرار دے اپنے ولی امام مہدیؑ کے ہمرکاب ہو کر کہ جو آل محمد علیہم السلام میں سے ہیں۔ • اَللّهُمَّ الْعَنْ قَتَلَةَ الْحُسَيْنِ عَلَيْهِ السَّلامُ - اے اللہ امام حسین علیہ السلام کے قاتلوں پر لعنت کر۔ خمسہ مجالس: آيۃ اللہ الشیخ محمد حسین النجفی مدظلہ جامعۃ المنتظر لاہور میں 6 تا 10 صفر 1433ھ یعنی 1 تا 5 جنوری 2012ء مجالس عزا سے خطاب فرمائيں گے۔ اوقات: 7:30 بجے شب مولانا غلام رضا ڈب خطاب فرمائيں گے۔ 8 بجے شب آيۃ اللہ نجفی خطاب فرمائيں گے۔ 9 بجے شب آيۃ اللہ نجفی سؤالات کے جوابات دیں گے۔ خمسہ مجالس کراچی: آيۃ اللہ الشیخ محمد حسین النجفی مدظلہ امام بارگاہ سید الشہداؑ (نمائش)، نزد محفلِ شاہِ خراسانؑ، سولجر بازار، کراچی میں 25 تا 29 جنوری 2012ء مجالس عزا سے خطاب فرمائيں گے۔ اوقات: 7:45 بجے شب مجلس کا آغاز ہوگا اور ٹھیک 8:30 بجے شب آيۃ اللہ نجفی زیب منبر ہوں گے۔ • یہ مجالس براہِ راست پروگرام کے صفحے پہ براہِ راست نشر کی جائیں گی انشاء اللہ۔
زيارة عاشوراء
السَّلأمُ عَلَيْكَ يَا أبَا عَبْدِاللهِ السَّلأمُ عَلَيْكَ يَا ابْنَ رَسُولِ اللهِ السَّلأمُ عَلَيْكَ يَا ابْنَ أمِيرِ المُؤْمِنينَ وَابْنَ سَيِّدِ الوَصِيِّينَ السَّلأمُ عَلَيْكَ يَا ابْنَ فاطِمَةَ الزّهراءِ سَيِّدَةِ نِساءِ العالَمِينَ السَّلأمُ عَلَيْكَ يَا ثَارَ اللهِ وابْنَ ثارِهِ وَالْوِتْرَ المَوْتُورَ السَّلأمُ عَلَيْكَ وَعَلَى الارْواحِ الّتي حَلّتْ بِفِنائِكَ۔ يَا أبَا عَبْدِ اللهِ لَقَدْ عَظُمَتِ الرَّزِيَّةُ وجَلّتْ وعَظُمَتْ المُصِيبَةُ بِكَ عَلَيْنا وَعَلَى جَمِيعِ أهْلِ الاسْلام وَجَلَّتْ وَعَظُمَتْ مُصِيبَتُكَ فِي السَّمَوَاتِ عَلَى جَمِيعِ أهْلِ السَّمَوَاتِ فَلَعَنَ اللهُ اُمَّةً أسَّسَتْ أساسَ الظُّلْمِ وَالجَوْرِ عَلَيْكُمْ أهْلَ البَيْتِ وَلَعَنَ اللهُ اُمَّةً دَفَعَتْكُمْ عَنْ مَقامِكُمْ وَأزالَتْكُمْ عَنْ مَراتِبِكُمُ الّتِي رَتَّبَكُمُ اللهُ فِيها وَلَعَنَ اللهُ اُمَّةً قَتَلَتْكُمْ وَلَعَنَ اللهُ الْمُمَهِّدِينَ لَهُمْ بِالتَّمْكِينِ مِنْ قِتالِكُمْ بَرِئْتُ إلى اللهِ وَإلَيْكُمْ مِنْهُمْ وَمِنْ أشْياعِهِمْ وَأتْباعِهِمْ وَأوْلِيائِهِمْ۔ يَا أبَا عَبْدِاللهِ إنِّي سِلْمٌ لِمَنْ سالَمَكُمْ وَحَرْبٌ لِمَنْ حارَبَكُمْ إلى يَوْمِ القِيامَةِ وَلَعَنَ اللهُ آل زِيَاد وَآلَ مَرْوانَ وَلَعَنَ اللهُ بَنِي اُمَيَّةَ قاطِبَةً وَلَعَنَ اللهُ ابْنَ مَرْجانَةَ وَلَعَنَ اللهُ عُمَرَ بْنَ سَعْد وَلَعَنَ اللهُ شِمْراً وَلَعَنَ اللهُ اُمَّةً أسْرَجَتْ وَألْجَمَتْ وَتَهيّأتْ وَتَنَقَّبَتْ لِقِتالِكَ بِأبِي أنْتَ وَاُمِّي لَقَدْ عَظُمَ مُصابِي بِكَ فَأسْالُ اللهَ الّذِي أكْرَمَ مَقامَكَ وَأكْرَمَنِي بِكَ و أنْ يَرْزُقَني طَلَبَ ثارِكَ مَعَ إمام مَنْصُور مِنْ أهْلِ بَيْتِ مُحَمَّد صَلّى الله عَلَيْهِ وَآلِهِ۔ اللهمّ اجْعَلْني عِنْدَكَ وَجِيهاً بِالحُسَيْنِ عَلَيهِ السَّلأم فِي الدُّنْيا وَالاخِرَةِ۔ يَا أبَا عَبْداللهِ إنِّي أتَقَرَّبُ إلى اللهِ تعالى وَإلَى رَسُولِهِ وَإلى أمِيرِ المُؤْمِنينَ وَإلَى فاطِمَةَ وإلى الحَسَنِ وَإلَيْكَ بِمُوالاتِكَ ومُوالاةِ أَوليائِك وَبِالبراءِةِ مِمَّنْ أسَّسَ أساسَ ذلِكَ وَبَنى عَلَيْهِ بُنْيانَهُ وَجَرَى في ظُلْمِهِ وَجَوْرِهِ عَلَيْكُمْ وَعَلَى أشْياعِكُمْ بَرِئْتُ إلى اللهِ وَإلَيْكُمْ مِنْهُمْ وَأتَقَرَّبُّ إلى اللهِ وَإلى رَسولِهِ ثُمَّ إلَيْكُمْ بِمُوالاتِكُم وَمُوالاةِ وَلِيِّكُمْ وَبِالْبَرَاءَةِ مِنْ أعْدائِكُمْ وَالنَّاصِبِينَ لَكُم الحَرْبَ وَبِالبَرَاءَةِ مِنْ أشْياعِهِمْ وَأتْباعِهِمْ يا أبا عَبدِ الله إنِّي سِلْمٌ لِمَنْ سالَمَكُمْ وَحَرْبٌ لِمَنْ حارَبَكُمْ وَوَلِيٌّ لِمَنْ والاكُمْ وَعَدُوٌّ لِمَنْ عاداكُمْ فَأسْألُ اللهَ الّذِي أكْرَمَني بِمَعْرِفَتِكُمْ وَمَعْرِفَةِ أوْلِيائِكُمْ وَرَزَقَني البَراءَةَ مِنْ أعْدائِكُمْ أنْ يَجْعَلَني مَعَكُمْ في الدُّنْيا وَالاخِرَةِ وَأنْ يُثَبِّتَ لي عِنْدَكُمْ قَدَمَ صِدْق في الدُّنْيا وَالاخِرَةِ وَأسْألُهُ أنْ يُبَلِّغَنِي الْمقامَ الْمَحْمُودَ لَكُمْ عِنْدَ اللهِ وَأنْ يَرْزُقَنِي طَلَبَ ثَارِي مَعَ إمَام مَهْدِيٍّ ظَاهِر نَاطِق بالحقِّ مِنْكُمْ وَأسْألُ اللهَ بِحَقِّكُمْ وَبِالشَّأنِ الَّذِي لَكُمْ عِنْدَهُ أنْ يُعْطِيَنِي بِمُصابِي بِكُمْ أفْضَلَ ما يُعْطِي مصاباً بِمُصِيبَتِهِ يا لَها منْ مُصِيبَة مَا أعْظَمَها وَأعْظَمَ رَزِيّتهَا فِي الاسْلامِ وَفِي جَمِيعِ أهلِ السَّموَاتِ وَالارْضِ۔ اللهُمَّ اجْعَلْني في مَقامِي هذا مِمَّن تَنالُهُ مِنْكَ صَلَواتٌ وَرَحْمَةٌ وَمَغْفِرَةٌ۔ اللهُمَّ اجْعَلْ مَحْيايَ مَحْيا مُحَمَّد وَآلِ مُحَمَّد وَمَماتي مَماتَ مُحَمَّد وَآل مُحَمَّد۔ اللهُمَّ إنَّ هَذا يَوْمٌ تَبَرَّكَتْ بِهِ بَنُو اُمَيَّةَ وَابْنُ آكِلَةِ الاكْبادِ اللعِينُ بْنُ ال لعِينِ عَلَى لِسانِكَ وَلِسانِ نَبِيِّكَ صَلّى الله عَلَيْهِ وَآلِهِ في كُلِّ مَوْطِن وَمَوْقِف وَقَفَ فِيهِ نَبيُّكَ صَلّى الله عَلَيْهِ وَآلِهِ۔ اللهُمَّ الْعَنْ أبَا سُفْيانَ وَمُعَاوِيَةَ وَيَزيدَ بْنَ مُعَاوِيَةَ وآلَ مَرْوَانَ عَلَيْهِمْ مِنْكَ اللعْنَةُ أبَدَ الابِدِينَ وَهذا يَوْمٌ فَرِحَتْ بِهِ آلُ زِيَاد وَآلُ مَرْوانَ عَليهِمُ اللَّعْنةُ بِقَتْلِهِمُ الحُسَيْنَ عَلَيْهِ السَّلأم۔ اللهُمَّ فَضاعِفْ عَلَيْهِمُ اللعْنَ وَالعَذابَ الالِيم۔ اللهُمَّ إنِّي أتَقَرَّبُّ إلَيْكَ في هذَا اليَوْمِ وَفِي مَوْقِفِي هَذا وَأيَّامِ حَيَاتِي بِالبَرَاءَةِ مِنْهُمْ وَاللعْنَةِ عَلَيْهِمْ وَبِالْمُوالاةِ لِنَبِيِّكَ وَآلِ نَبِيِّكَ عَلَيِه وعَلَيْهِمُ السَّلأمُ۔ پھر 100 مرتبہ کہے اللهُمَّ الْعَنْ أوّلَ ظالِم ظَلَمَ حَقَّ مُحَمَّد وَآلِ مُحَمَّد وَآخِرَ تَابِع لَهُ عَلَى ذلِكَ اللهُمَّ الْعَنِ العِصابَةَ الَّتِي جاهَدَتِ الْحُسَيْنَ عَلَيْهِ السَّلأم وَشايَعَتْ وَبايَعَتْ وَتابَعَتْ عَلَى قَتْلِهِ۔ اللهُمَّ الْعَنْهم جَميعاً۔ پھر 100 مرتبہ کہے السَّلأمُ عَلَيْكَ يَا أبا عَبْدِاللهِ وَعلَى الارْواحِ الّتي حَلّتْ بِفِنائِكَ عَلَيْكَ مِنِّي سَلامُ اللهِ أبَداً مَا بَقِيتُ وَبَقِيَ الليْلُ وَالنَّهارُ وَلا جَعَلَهُ اللهُ آخِرَ العَهْدِ مِنِّي لِزِيَارَتِكُمْ السَّلأمُ عَلَى الحُسَيْن وَعَلَى عَليِّ بْنِ الحُسَيْنِ وَعَلَى أوْلادِ الحُسَيْنِ وَعَلَى أصْحابِ الحُسَينِ۔ پھر کہے اللهمَّ خُصَّ أنْتَ أوّلَ ظالم بِاللّعْنِ مِنِّي وَابْدَأْ بِهِ أوّلاً ثُمَّ الثَّانِي وَالثَّالِثَ وَالرَّابِع۔ اللهُمَّ الْعَنْ يزِيَدَ خامِساً وَالْعَنْ عُبَيْدَاللهِ بْنَ زِيَاد وَابْنَ مَرْجانَةَ وَعُمَرَ بْنَ سَعْد وَشِمْراً وَآلَ أبي سُفْيانَ وَآلَ زِيَاد وآلَ مَرْوانَ إلَى يَوْمِ القِيامَةِ۔ پھر سجدے میں جاۓ اور کہے اللهمَّ لَكَ الحَمْدُ حَمْدَ الشَّاكِرينَ لَكَ عَلَى مُصابِهِمْ الحَمْدُ للهِ عَلَى عَظِيمِ رَزِيّتي۔ اللهُمَّ ارْزُقْني شَفاعَةَ الحُسَيْن عَلَيهِ السَّلأم يَوْمَ الوُرُودِ وَثَبِّتْ لي قَدَمَ صِدْق عِنْدَكَ مَعَ الحُسَيْنِ وَأصْحابِ الحُسَيْن الّذِينَ بَذَلُوا مُهَجَهُمْ دُونَ الْحُسَيْن عَلَيْهِ السَّلأم۔ • یَا عَلِیُّ یَا عَظِیْمُ یَا غَفُوْرُ یَا رَحِیْمُ اَنْتَ الرَّبُّ الْعَظِیْمُ الَّذِیْ لَیْسَ کَمِثْلِہٰ شَیْئٌ وَّ ھُوَ السَّمِیْعُ الْبَصِیْرُ وَ ھٰذَا شَھْرٌ عَظَّمْتَہ، وَ کَرَّمْتَہ، وَ شَرَّفْتَہ، وَ فَضَّلْتَہ، عَلَی الشُّھُوْرِ وَ ھُوَ الشَّھْرُ الَّذِیْ فَرَضْتَ صِیَامَہ، عَلَیَّ وَ ھُوَ شَھْرُ رَمَضَانَ الَّذِیْ اَنْزَلْتَ فِیْہِ الْقُرْاٰنَ ھُدًی لِلنَّاسِ وَ بَیِّنَاتٍ مِّنَ الْھُدٰی وَ الْفُرْقَانِ وَ جَعَلْتَ فِیْہِ لَیْلَۃَ الْقَدْرِ وَ جَعَلْتَھَا خَیْراً مِنْ اَلْفِ شَھْرٍ فَیَاذَا الْمَنِّ وَلاَ یُمَنُّ عَلَیْکَ مُنَّ عَلَیَّ بِفَکَاکِ رَقَبَتِیْ مِنَ النَّارِ فِیْمَنْ تَمُنُّ عَلَیْہِ وَ اَدْخِلْنِی الْجَنَّۃَ بِرَحْمَتِکَ یَا اَرْحَمَ الرَّاحِمِیْنَ۔
سوانحِ حیات
مختصر حالات و کوائف
سرکار آیۃ اللہ علامہ الشیخ محمد حسین النجفی مد ظلہ العالی کی ولادت تقریبا" اپریل 1932ء میں بمقام جہانیاں شاہ ضلع سرگودھا کے ایک جٹ زمیندار اور علمی خانوادہ "ڈھکو" میں ھوئ۔
پڑھنے پڑھانے کے مختصر واقعات
قریبا" پانچ سال کی عمر میں سکول میں داخلہ لیہ اور ابھی ثانوی کلاسوں تک پہنچے ھی تھے کہ 1945ء میں آپ کے والد ماجد رانا تاج الدین صاحب (جو کہ بڑے دیندار اور نیکوکار انسان تھے) انتقال کرگئے۔ ان کی دیرینہ خواھش تھی کہ آپ کو عالم دین بنائیں گے۔ لہذا ان کی اس نیک تمنا کی تکمیل آپ کی والدہ ماجدہ نے یوں کی کہ انہوں نے آپ کو مدرسہ محمدیہ جلالپور ننکیانہ ضلع سرگودھا میں داخل کرایا جہاں تدریس کے فرائض علوم شرقیہ کے فاضل مدرس آيۃ اللہ علامہ حسین بخش مرحوم جاڑا انجام دیتے تھے۔ ابتدائ کتب وھاں پڑھیں اور پھر 1947ء میں بدرھرجبانہ ضلع جھنگ میں استاد العلماء حضرت آیۃ اللہ علامہ محمد باقر صاحب قبلہ چکڑالوی کے زیر سایہ درس نظامی کا وسطائ حصہ پڑھا اور چونکہ اس وقت استاد العلماء مکقوف البصر ھو چکے تھے اور پڑھایا بھی کرتے تھے اور دوسری طرف سرکار موصوف کے شاگرد رشید جامع العقول و المنقول، حاوی الاصول و الفروع، حضرت آيۃ اللہ علامہ سید محمد یار شاہ صاحب قبلہ علی پور سے جلالپور تشریف لا چکے تھے، اور ملک میں ان کے فضل و کمال اور تدریس کی دھوم مچی ھوئ تھی، اس لیے آپ سرکار موصوف سے اجازت لے کر پھر 1949ء میں جلالپور آگۓ اور مسلسل پانچ سال تک اس فاضل جلیل سے اپنی علمی پیاس بجھائ یعنی درس نظامی کی انتہائ کتابیں جس میں تمام علوم ادبیہ و منقولات کے علاوہ معقولات میں قطبی مسلم العلوم اور اس کے بعض شروع مبیذی و شمش بازغہ وغیرہ سرکار موصوف سے پڑھیں، علاوہ بریں شرائع الاسلام اور شرح لمعہ جلدین اور معالم الاصول وغیرہ بھی انہیں سے پڑھیں۔ اس دوران 1953ء میں پنجاب یونیورسٹی سے مولوی فاضل کا امتحان امتیازی حیثیت سے پاس کیا۔ اور اپنے علمی شوق و ذوق کی تکمیل اور اپنے استاد محترم کی تحریک و تشویق پر 1954ء میں حوزہ علمیہ نجف اشرف (عراق) تشریف لے گۓ اور وھاں سطحیات پڑھنے کے لیے خصوصی درسوں کا انتظام کیا یعنی کفایہ، رسائل اور مکاسب استاد العلماء سید ابوالقاسم بہشتی سے پڑھیں اور شرح منظومہ کی جلدین جناب آقاۓ فاضل سے پڑھیں، اور علم ھیئت کی شرح چغمینی آقاۓ سید مرعشی سے پڑھیں۔ اور اسفار اربعہ کے کچھ درس آقاۓ ملا صدرا نجفی سے لیے۔ الضرض اندرون ملک اور بیرون ملک ان فنون کے پڑھنے پر زیادہ توجہ دی جن کی اپنے ملک و ملت کو زیادہ ضرورت ھے اور سطحیات سے فراغت کے بعد درس خارج شروع کیا جو کہ اصول فقہ میں سید المجتہدین آقاۓ سید جواد تبریزی اور استاذ المجتہدین آقائ مرزا محمد باقر زنجانی کے علمی درس میں شرکت کی اور فقہ میں سرکار آیت اللہ محمود شاھرودی اور مرجع اکبر آیت اللہ آقاۓ سید محسن الحکیم کی خدمت میں زانوۓ تلمز تہ کیا۔ الغرض اس دوران موصوف پڑھتے بھی رھے اور پاکستانی طلبہ کو پڑھاتے بھی رھے اور بالآخر شب و روز کی محنت شاقہ کے نتیجے میں بفضلہ تعالی وھاں کے اعلام سے اجازہ ھاۓ اجتہاد لے کر مدرسہ محمدیہ سرگودھا کی دعوت پر 1960ء میں پاکستان تشریف لاۓ اور قریبا" بارہ سال تک وھاں پرنسپل کے فرائض انجام دیے اور اس طرح سیکڑوں طلبہ علوم دینیہ کی پیاس بجھائ۔ والحمد للہ۔
آپ کے علمی و عملی کارنامے
یہ بات اظھر من الشمس ھے کہ مبدا فیض سے بڑی فیاضی کے ساتھ آپ کو ذھانت، فطانت اور قوت حافظہ عطا ھوئ ھے، اور اس پر ذاتی جدوجہد اور بےپناہ کدوکاوش متزاد ھے۔ یہی وجہ ھے کہ انہوں نے سالوں کے درس مہینوں میں، مہینوں کے ھفتوں میں، اور ھفتوں کے دنوں میں ختم کیے ھیں، اور جو چیز ایک بار نگاہ سے گزر گئ ھے وہ حافظے میں محفوظ ھو گئ ھے۔ چناچہ بے حساب آیت و احادیث اور اقوال کے علاوہ بے شمار عربی، فارسی اور اردو اشعار کا یاد ھونا اس کا زندہ شاھکار ھے۔ علاوہ بریں خالق مہربان سے ان کو کم نظیر ملکہ تقریر و تحریر اور تدریس عنایت ھوا ھے، چناچہ وہ ایک خاص طرز خطابت اور مخصوص طرز نگارش اور محققانہ طرز تدریس کے مالک ھیں، اندرون و بیرون ملک ان کی ھزاروں تقریریں اور اسلامیات کے ھر مو‌ضوع پر بیسیوں کتب و رسائل اور بے انداز تحریریں اس بات کی شاھد صادق ھیں۔
اصلاحی پروگراموں کا آغاز
چونکہ آپ کے پہلو میں دل اور دل میں ملک و ملت کا احساس سود و زیاں رکھتے ھیں۔ اس لیے پاکستان آتے ھی جب انہوں نے دیکھا کہ وراثت انبیاء و آئمہ طاھرین یعنی منبر رسول جہال و ضلال کے قبضے میں ھے، جنہوں نے مجالس عزا جیسی بہترین عبادت کو بدترین قسم کی تجارت بنا دیا ھے اور قوم کو عقائد میں شرک اور اعمال میں فاسق بنا دیا ھے، الا ما شاء اللہ۔ اور عامۃ الناس صحیح عقائد اور عمل کی بات سننے کے لیے بھی آمادہ نہیں ھیں تو انہوں نے پہلے 1962ء-1963ء میں "المبلغ" سرگودھا میں "اصلاح المجالس و المحافل" کے نام سے مسلسل زوردار مضامین لکھے اور پھر انہیں کتابی شکل میں شائع کیا، جس میں خصوصیت کے ساتھ چار باتیں ثابت کیں اور انہیں پر زور دیا:
أ. مجالس عزا منعقد کرنا، پڑھنا اور سننا عبادت ھیں، لہذا مجالس پڑھنے پر مک مکا اور چک چکا کرنا حرام ھے۔
ب. مجالس میں غنا و سرود یعنی فلمی طرزوں میں قصائد و مراثی کا پڑھنا حرام ھے۔
ج. بدکردار اور محلوق للحیہ قسم کے لوگوں کا منبر پر آنا حرام ھے۔
د. فضائل ھوں یا مصائب، ان کے بیان کرنے میں جھوٹ کی آمیزش حرام اور گناہ کبیرہ ھے۔
اس کاروائی کا رد عمل
ان مضامین اور رسالے کا شائع ھونا تھا کہ تاجران خون حسین علیہ السلام ذاکروں اور مقروں نے پورے ملک میں ایک طوفان بدتمیزی کھڑا کردیا۔ ھر جگہ تقریروں میں سب و شتم اور غیبت و بہتان کا ایک سیلاب آگیا اور اس وقت سے آپ کے اور اس طبقے کے درمیان جو خلیج حائل ھوئ وہ آج تک باقی ھے کم ضرور ھوئ ھے، مگر ختم نہیں ھوئ۔ اسی دوران رسالے کے بعض جوابات بھی دیے گۓ جن کا اگلے ایڈیشن میں جواب الجواب دے دیا گیا۔
عظیم الشان کتب "احسن الفوائد" اور "اصول الشریعہ" کی تالیف
ان حالات سے گھبرانے کے بجاۓ الٹا ان حالات و واقعات نے آپ کے اصلاحی پروگراموں کے عزم و ارادے کو اور ممیز کردیا۔ چناچہ 1965ء میں آپ نے حضرت شیخ صدوق علیہ الرحمۃ کے رسالے "اعتقادیہ" کی ضخیم شرح بنام "احسن الفوائد فی شرح العقائد" شائع کی، جس میں مذھب شیعہ کے تمام صحیح اصول و عقائد سے قوم کو روشناس کرایا۔
اس پر بعض حلقوں کی جانب سے ایرادات ھوۓ اور بعض جوابی کتابیں لکھی گئیں جن کے جواب الجواب میں آپ نے 1966ء میں "اصول الشریعہ" لکھ کر ھر قسم کے قیل و قال کا سد باب کردیا اور اصل حقائق کے اثبات پر دلائل کے پہاڑ کھڑے کر دیے۔ اگرچہ مخالفین بڑے تلملاۓ اور آتش زیرپا ھوۓ مگر کوئ علمی جواب نہ دے سکے سواۓ آئیں بائیں شائیں کے جن پر اگلے ایڈیشن میں مکمل تبصرہ کرکے ھباء منشوا" کردیا۔
اور کچھ عرصے بعد سرکار علامہ مجلسی علیہ الرحمۃ کے "رسالۃ اللیلیہ" کی شرح بنام "اعتقادات امامیہ در شرح رسالۃ اللیلیہ" لکھ کر اس موضوع کو اختتام تک پہنچا دیا، اور عقائد کے معاملے میں عوام کو خودکفیل بنا دیا۔
چونکہ"اصلاح المجالس و المحافل" میں ذاکرین اور مقررین کی غلط بیانی پر سخت تنقید کی گئ تھی لہذا ان کی طرف نے اصرار تھا کہ انہیں صحیح واقعات کربلا پر مشتمل کتاب لکھ کر دی جاۓ، چناچہ آپ نے واقعات کربلا پر ایک مستند کتاب بنام "سادۃ الدارین فی مقتل الحسین (ع)" شائع کر کے قوم کے حوالے کی۔
مذھبی سرحدوں کی حفاظت اور پاسداری
اپنے قومی اصلاحی پروگراموں کی بےپناہ مصروفیات کے باوجود آپ مذھبی سرحدوں کی حفاظت اور ان کی پاسداری سے بھی غافل بھی نہیں رھے۔ چناچہ مخالفین مذھب شیعہ کے بےجا ایرادات کے جواب اور اپنے مذھب کی حقانیت پر چند لاجواب کتابیں قوم کو دیں، جیسے "اثبات الامامت"، "تحقیقات الفریقین"، "تجلیات صداقت بجواب آفتاب ھدایت"، "تنزیہہ الامانیہ عما فی رسالہ مذھب شیعہ" جن میں مخالفین کی بعض معرکۃ الآرا کتابوں کے اور ان کے سب اعتراضات کے مکمل و مدلل جواب لکھ کر مذھب حق کی حقانیت کو آشکار کیا۔
علاوہ بریں آپ نے قران مجید کی عدیم النظیر 10 جلدوں میں تفسیر بنام "فیضان الرحمن فی تفسیر القرآن" لکھ کے شیعہ تفاسیر میں بہترین اضافہ کیا۔ اس کے علاوہ "وسائل الشیعہ" کا ترجمہ و تحشیہ 20 جلدوں میں کر کے اردو میں شیعہ لٹریچر میں قابل قدر اضافہ کیا، جس کی تا حال 13 جلدیں شائع ھو چکی ھیں اور یہ مقدس سلسلہ ھنوز برابر جاری ھے۔ خدا انہیں ان کی تکمیل کی توفیق دے، آمین۔
علاوہ بریں آپ کا فقہی شاھکار بنام "قوانین الشریعہ فی فقہ الجعفریہ" یہ دو جلدوں میں شائع ھو چکا ھے اور اب اس کی تیسری طباعت ھو رھی ھے۔ زمانہ حاضرہ کے تقاضوں کے مطابق مدلل طور پر فقہ جعفریہ پیش کی گئ ھے اور ھر اختلافی مسئلے میں فقہ جعفریہ کی دوسرے اسلامی مکاتب فقہ پر برتری ثابت کی گئ ھے۔
اور 1995ء میں ان غلط رسموں پر جن میں قوم و ملت مبتلا ھے بنام "اصلاح الرسوم الظاھرہ بکلام العترۃ الطاھرہ" لکھ کر قوم پر حجت تمام کردی، اور اصلاح احوال کی کوششوں کو آخری حد تک پہنچا دیا۔
آج کل شیعوں کے خلاف لکھی گئی کتب "رسالۂ شیعہ" اور "تحفۂ حسینیہ" کا جواب "تنزیہہ الامامیہ فی جواب رسالۂ شیعہ و تحفۂ حسینیہ" رقم کررہے ہیں جو انشاء اللہ جلد چھپ کے قوم تک پہنچے گا۔
ان کاروائیوں کا اثر
بہر حال بقول شاعر
کہتا ھے کون نالۂ بلبل کو بے اثر
پردےمیں گل کےلاکھ جگرچاک ھو گۓ
آپ کی ان کوششوں اور کاوشوں اور رفقاءِ کار علماءِ اعلام کی تقریروں اور تحریروں کا یہ اثر ہوا کہ اندرونِ ملک اور بیرونِ ملک عقیدہ و عمل میں ایک انقلاب آگیا ہے۔ اور حق و حقیقت بے نقاب ہو کر قوم کے سامنے آگئے ہیں اور بفضلہٖ تعالٰی ہر جگہ حق جُو، حق گو اور حق پرست لوگوں کا ایک قابلِ قدر طبقہ پیدا ہو چکا ہے۔ جو حق و حقیقت کا پرچم تھامے اور باطل پرستوں کی آنکھوں میں آنکھیں ڈالے منزلِ مقصود کی طرف رواں دواں ہے۔ لہٰذا آپ فخر سے کہہ سکتے ہیں:
گئے دن کہ تنہا تھا میں انجمن میں
یہاں اب میرے رازداں اور بھی ہیں
والحمد للہ
سلطان المدارس الاسلامیہ کی تاسیس
آپ جانتے ہیں کہ صرف زبانی تبلیغ کرنا ہی کافی نہیں ہے اور نہ ہی صرف تصنیف و تالیف پر اکتفا کرنا درست ہے۔ بیشک انکی افادیت مسلم ہے مگر چراغ سے چراغ جلانے اور اس علمی شمع کو بجھنے سے بچانے کیلیئے دینی مدارس کا اجراء اور ان کا استحکام بھی اشد ضروری ہے۔ چنانچہ اسی ضرورت کے تحت انہوں نے سرگودھا شہر میں ایک بڑا علمی مدرسہ بنام جامعۂ علمیہ سلطان المدارس الاسلامیہ ربع صدی سے جاری کر رکھا ہے۔ جسمیں پانچ مدرسینِ عظام فرائضِ تدریس انجام دے رہے ہیں اور بفضلہٖ تعالٰی مدرسہ شاہراہِ ترقی پر گامزن ہے اور اپنی ایک انفرادی حیثیت رکھتا ہے۔
صفحۂ اول | قرآن مجید | توضیح المسائل | سوانحِ حیات | کتب | سوال و جواب | ویڈیوز | مجلات | گوشۂ تصاویر
اس ویب سائٹ کو دیکھنے کی بہترین سکرین ریزولیوشن 1024x768px ہے۔
© 2013-2009 www.sibtain.com - تمام حقوق بحقِ ادارہ محفوظ ہیں۔